شانگلہ الپوری ( رضاشاہ سے) صوبالی حکومت خیبر پختون خواہ کے نا قیص پالیسوں کی وجہ سے گزشتہ روز پین ضلع شانگلہ کا ایک احتجاجی مظاہرہ شانگلہ پریس کلب الپوری کے سامنے ہوا احتجاجی مظاہرے میں ضلع بھر سے تعلق رکھنے والے تمام پراییوٹ سکولوں کے اساتذہ نے کثیر تعداد میں شرکت کیا احتجاجی مظاہرے سے پرنسپل محمد علی داموڑی پرنسپل حمید الرحمن حفظ الپوری سکول نے خطاب کرتے ہوے کہا کہ حکومت وقت تو تعلیم عام کرنے کی بلند اور بھانک دعوے تو کر رہی ہے مگر یہاں ضلع شانگلہ میں شرح خواندہ گی نہ ہونے کی بھرابھر ہے لیکن اس کے باوجود ہم پراییوٹ سکولوں کو اپنی مدد اپ کہ تحت اپنے کم وصایل میں چلا رہے ہیں ہم جن پچوں سے فس وصول کرتے ہیں تو اس میں سے بڑی مشکل سیاساتذہ کی تنخوایں اور بلیڈینگ کرایہ بڑی مشکل سے پوری ہو رہی ہے لیکن اس کے باوجود حکومت ہماری حوصلہ افزای کے بجاے ہماری حوصلہ شکنی کررہی اور ایے روز نیے نیے قراردادیں پاس کر رہی جو ہمارے ساتھ سراسر ظلوم اور نا انصافی ہے پین کے ضلعی صدر دلداراالحق نے خطاب کرتے ہوے کہا کے اس وقت پورے ضلع شانگلہ کے پبلیک سکولوں سے چالیس فیصد طلبا اور طلبات فارغ ہوکر اچھی کالجوں اور ینورسٹوں میں تعلیم حاصل کر رہے ہیں اس کہ باوجود ہم نے اس سلسلے میں حکومتی اہلکاروں کے ساتھ کہی دفعہ مزکرات بھی کیے ہیں لیکن اج صوبالی حکومت کی ظلمانہ فصلے کی وجہ سے ہم سڑکوں پر نکلنے پر مجبور ہو گیے ہیں انھوں مزید وضاحت کرتے ہوے کہاکہ اگر صوبالی حکومت نے ہمارے مطالبات پر ہمدردانہ غور نہیں کیا تو پھر ہم مجبورن نیا لاعمل طوے کرینگے کیونکہ اس وقت پچیس دوسرے اضلاع میں ہمارہ یہ احتجاج جاری ہے ایندہ لا عمل صوبالی قاعدین کے مشورے پر کیا جایگاہ۔

This Post Has Been Viewed 15 Times